in ,

جیک ما چین کا امیر ترین آدمی کیسے بنا،زندگی کی حقائق سے وابستہ کہانی

جیک ما کا شمار ای-کامرس کے بانی افراد میں ہوتا ہے۔جیک ما کا مقصد چینی مصنوعات بنانے والوں کو غیر ملکی خریداروں کے ساتھ جوڑنا تھا۔اس مقصد کے لئے جیک ما نے 1999 میں علی بابا ڈاٹ کام کے نام سے ایک کمپنی کی بنیاد رکھی۔جس کے ریکارڈ بزنس کی بدولت جیک ما چین کا امیر ترین آدمی بننے میں کامیاب ہوا۔31 مارچ 2017 کی ایک رپورٹ کے مطابق علی بابا کی مجموعی آمدنی 23 ارب ڈالر تھی جو کہ ایمازون اور ای-بے دونوں کمپنیوں کی مجموعی آمدنی سے بھی زیادہ ہے۔31 مارچ 2018 کی ایک رپورٹ کے مطابق جیک ما کے مجموعی اثاثوں کا تخمینہ 42.4 ارب ڈالر لگایا گیا جس کے بعد جیک ما جین کے امیر ترین آدمیوں کی فہرست میں پہلے جب کہ دنیا کے امیر ترین آدمیوں کی فہرست میں ساتویں نمبر پر براجمان ہو گئے۔۔۔

اگر ہم جیک ما کی ابتدائی زندگی کا جائزہ لیں تو آج دنیا کے کامیاب ترین آدمی نظر آنے والے جیک ما اپنے پیچھے ایک ناکام ماضی رکھتے ہیں۔جیک ما 10 ستمبر 1964 کو ہینگ ژو،چین میں پیدا ہوئے۔اُنکا تعلیمی سفر انتہائی کٹھن رہا اور جگہ جگہ پر آپکو ناکامیوں کا منہ دیکھنا پڑا۔جیک ما کو پرائمری اسکول کے امتحان میں دو دفعہ جب کہ مڈل اسکول کے امتحان میں تین دفعہ ناکامی کا منہ دیکھنا پڑا۔ہائی اسکول کا بعد یونیورسٹی میں داخلے کے امتحان میں بھی جیک ما کو تین دفعہ ناکامی ہوئی جب کہ چوتھی بار وہ ہینگ ژو یونیورسٹی میں داخلہ لینے میں کامیاب ہو گئے۔بلآخر جیک ما انگریزی میں بی اے کرنے میں کامیاب ہو گئے۔بی اے کرنے کے بعد جیک ما نے ملازمت حاصل کرنے کی بھرپور کوششیں کیں لیکن بیسیوں مرتبہ مسترد ہونے کے باوجود جیک ما نے ہار نہیں مانی۔جیک ما ہارورڈ یونیورسٹی سے 10 بار مسترد ہوئے۔محکمہ پولیس کی طرف رُخ کیا تو 5 میں سے واحد مسترد ہونے والا شخص جیک ما تھا۔اسی طرح٬ کے-ایف-سی میں ملازمت حاصل کرنے کے دوران 24 میں سے واحد مسترد شخص جیک ما تھا۔جیک ما اپنی زندگی میں ہینگ ژو ڈزنی یونیورسٹی میں بطور انگریزی لیکچرر ،واحد ملازمت حاصل کرنے میں کامیاب ہوا جسکی تنخواہ محض 12 ڈالر تھی۔

ہر طرف سے ناکامی کا سامنا کرنے کے باوجود جیک ما 1995 میں امریکہ چلا گیا اور وہاں پر انٹرنیٹ کے بارے معلومات اکٹھی کرنی شروع کر دی۔اسکے بعد جیک ما نے انٹرنیٹ پر بزنس کرنے کا ارادہ کیا۔1995 میں جیک ما نے ساٹھ ہزار ڈالر کی خطیر رقم اکٹھی کی اور اپنے دوست اور بیوی کے ساتھ مل کر ایک کمپنی کی بنیاد رکھی جس کا مقصد دوسری کمپنیوں کے لئے ویب سائیٹس ڈیزائن کرنا تھا۔تین سال کے اندر اندر اس کمپنی نے آٹھ لاکھ امریکی ڈالر کمائے جو کہ ایک ریکارڈ آمدن تھی۔اسکے بعد جیک ما نے علی بابا ڈاٹ کام کی بنیاد رکھی جس نے کامیابیوں کے جھنڈے گاڑتے ہوئے ریکارڈ بزنس کیا۔اسکے بعد جیک ما نے مختلف کمپنیوں کی بنیاد رکھی اور دیکھتے دیکھتے ایک ناکام آدمی سے چین کا امیر ترین آدمی بننے میں کامیاب ہو گیا۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

کالاباغ ڈیم سے پاکستان کو کیا کیا فوائد حاصل ہو سکتے ہیں اور نہ بننے کی وجہ جانیے.

امریکہ کشمیر کے معاملے پر ثالثی کا کردار ادا کرے گا کہ نہیں؟ ٹرمپ کے کیا خیالات ہیں