in

بھارت کو رافیل طیاروں کی پہلی قسط موصول ہو گئی

ہر گزرتے دن کے ساتھ دنیا روایتی ہتھیاروں کو ترک کرتے ہوئے جدید ہتھیاروں کی طرف راغب ہوتی جا رہی ہے۔آئے دن ہر ملک خود کو غیر محفوظ تصور کر رہا ہے اور خود کو جدید ٹیکنالوجی سے لیس کرتے ہوئے اربوں روپے اپنے دفاع پر خرچ کر رہا ہے۔پاک بھارت تنازعات کئی دہائیوں سے چل رہے ہیں جسکی وجہ سے دونوں ممالک کے دفاع پر اخراجات دونوں ممالک پر بوجھ بنتے جا رہے ہیں۔بھارت کی فرانس سے رافیل طیاروں کی ڈیل بھی اپنے دفاع کو ناقابل تسخیر بنانے کی ایک کڑی ہے۔

بھارت نے 2016 میں فرانس سے 36 رافیل طیاروں کی خریداری کا معاہدہ کیا جس کی لاگت 59000 کروڑ کے لگ بھگ تھی۔اس معاہدے کے تحت فرانس فروری 2021 تک 18 طیارے بھارت کے حوالے کرے گا جب کہ باقی 18 طیارے مئی 2022 تک بھارت کے حوالے کیے جائیں گے۔رافیل طیارے جدید ٹیکنالوجی سے لیس ہیں۔ یہ طیارے 780 سے 1650 کلو میٹر تک ہدف کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتے ہیں.اس کے علاوہ ان میں ہر قسم کے ہتھیار لانے اور لے جانے کی صلاحیت موجود ہے۔ان طیاروں کو جیم نہیں کیا جا سکتا اور ان کو عام ریڈار سے با آسانی ڈیٹیکٹ نہیں کیا جا سکتا۔۔۔

رافیل طیارے جدید ٹیکنالوجی کے حامل طیار ے ہیں جو کہ عام طیاروں سے بہت مختلف ہیں۔ان طیاروں کو آپریٹ کرنے کے لئے بھارتی پائلٹس کو تربیت بھی فرانس دے گا۔جس کے بعد طیارے بھارت کے حوالے کیے جائیں گے۔گزشتہ روز بھارتی وزیرِ خارجہ راج ناتھ سنگھ نے پہلا رافیل طیارہ موصول کیا جس کے بعد اُنہوں نے کہا کہ اس کا مقصد بھارتی دفاع کو مضبوط بنانا ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

قندیل کے بھائی کو کل پولیس عدالت میں پیش کرنے جا رہی ہے

پاک-سری لنکا تیسرے ٹی ٹوئنٹی میں اسٹیڈیم گلابی رنگ میں نہلا جائے گا