نمرتا کیس میں کیا کچھ پیش رفت ہوئی

0
31

ڈینٹل کالج میں بی ڈی ایس کے آخری سال کی طالبہ پیر کے روز پراسرار حالات میں اپنے ہاسٹل کے کمرے میں مردہ پائی گئی۔ گمان کیا گیا تھا کہ اس نے خودکشی کرلی ہوگی۔
پولیس نے بدھ کے روز نمریتا چندانی کے مبینہ قتل کیس میں کم از کم دو مشتبہ افراد کو گرفتار کرنے کا دعوی کیا ہے۔

سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس (ایس ایس پی) لاڑکانہ کے مطابق ، مشتبہ افراد ڈینٹل کالج میں بی ڈی ایس فائنل ایئر کی طالبہ نمریت چاندنی کی قریبی دوست اور ہم جماعت تھیں جو اس ہفتے کے اوائل میں لاڑکانہ میں اپنے ہاسٹل کے کمرے میں مردہ پائی گئیں۔
اسے یقین تھا کہ پولیس کو تفتیش کے دوران مشتبہ افراد سے نمریت کے مبینہ قتل میں کچھ اہم سراغ ملیں گے۔

پولیس افسر نے بتایا کہ نمرتا کے سیل فون سے کچھ ٹیکسٹ میسجز کو ہٹا دیا گیا ہے اور مزید کہا کہ اس کا موبائل فون اسلام آباد میں ایف آئی اے کے ہیڈ آفس کو فرانزک معائنہ کے لئے بھیجا گیا تھا۔

اس سے قبل 17 ستمبر کو مردہ خاتون میڈیکل کی طالبہ نمرٹا کے بھائی نے اپنی خودکشی کے دعوؤں کو مسترد کرنے کے بعد چانڈکا میڈیکل کالج میں اپنی بہن کے ’قتل‘ کا شبہ ظاہر کیا تھا۔

ہاسٹل کے کمرے میں مردہ پائے جانے والے نمرتا کے بھائی ڈاکٹر وشال نے اس واقعے کو ’ایک قتل‘ قرار دیتے ہوئے اپنی بہن کا پوسٹ مارٹم کروانے کا اعلان کیا تھا۔

میڈیا کو اپنے بیان میں ، وشال نے کہا تھا کہ اس خاندان نے مقامی انتظامیہ سے نجی اسپتال سے اپنی بہن کا پوسٹ مارٹم کروانے اور تمام اخراجات برداشت کرنے کی اجازت طلب کی تھی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here