پاکستان فیشن انڈسٹری میں کون لیڈ کر رہا ہے اور کون اس دوڑ میں شامل ہے

0
22

یہ کہا جاتا ہے کہ ایک اچھا لباس انسان کی شخصیت میں نکھار پیدا کرتا ہے۔جب کہ بغیر کپڑوں کے آدمی کی معاشرے میں کوئی حیثیت نہیں ہوتی۔بیسویں صدی کے آغاز سے ہی دنیا میں بیش بہا تبدیلیاں وقوع پذیر ہونے لگ گئیں اور ایک قدیم انسان جدید انسان کے روپ میں ڈھلنے لگا جس نے جدت کا سفر طے کرتے ہوئے پہلے تو خود کو معاشرے کا حصہ بنایا،اسکے ساتھ ساتھ خود بھی زمانے کی روایات یا ٹرینڈز کے ساتھ چلنا شروع کر دیا۔اس جدید انسان نے معاشرے میں اپنی برتری قائم رکھنے کے لئے اپنی شخصیت کے ساتھ ساتھ اپنے لباس کو بھی بہتر کرنا شروع کر دیا اور اس طرح فیشن کی ابتدا ہوئی۔۔۔

دنیا کی فیشن انڈسٹریز میں پاکستانی فیشن انڈسٹری اس وقت ایک ایسی انڈسٹری ہے جو تیزی سے ترقی کی طرف گامزن ہے۔پاکستان میں بہت سے ایسے برانڈز کام کر رہے ہیں جو مہنگے مہنگے ملبوسات تیار کرتے ہیں اور جنہیں ملکی اور غیر ملکی سطح پر بہت پسند کیا جاتا ہے۔کسی بھی انڈسٹری میں اگر مقابلے کی فضا قائم ہو جائے تو وہ انڈسٹری دن بدن عروج کی طرف گامزن رہتی ہے اور یہی وجہ ہے پاکستانی فیشن مارکیٹ میں مختلف برانڈز کے درمیان ایک دوسرے پر سبقت لینے کے لئے اس وقت کانٹے کا مقابلہ ہے۔

حال ہی کی ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان کی فیشن انڈسٹری کا “کھاڈی برینڈ” اس وقت سرِ فہرست ہے۔کھاڈی کی بنیاد 1998 میں رکھی گئی اور اسکی شروعات کراچی سے کی گئی۔کھاڈی کے مالک شامون سلطان ہیں۔کھاڈی کی مقبولیت قدیم اور جدید ڈیزائنز کے مکچرز تیار کرنا ہے جسے لوگ کافی سراہتے ہیں۔کھاڈی ایک گلوبل برینڈ ہے جس کے پاکستان میں 52 سٹورز ہیں جب کہ امریکہ،برطانیہ،یو اے ای،بحرین اور قطر سمیت کئی ممالک میں اسکے 21 سٹورز ہیں۔کھاڈی اپنے جدید ملبوسات ،جوتوں،خوشبوات اور بالوں اور جلد کی فیشن کی معیاری اشیاء تیار کرنے کی وجہ سے اپنے خریداروں میں مقبول ہے۔اس کے علاوہ پاکستانی فیشن انڈسٹری میں گل احمد برینڈ بھی خاصی شہرت رکھتا ہے۔یہ برینڈ 1953 میں مارکیٹ میں آیا اور پاکستان کے زیادہ آمدنی کمانے والے برینڈ میں اسکا شمار ہوتا ہے۔ان دو کے علاوہ جے ڈاٹ،ثنا سفیناز،الکرم وغیرہ کا شمار بھی نامور برینڈز میں ہوتا ہے اور مارکیٹ میں اس وقت سب میں کانٹے کا مقابلہ ہے۔۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here