سعودی عرب نے سیاحوں کے لیے پردے کے سلسلے میں نئے احکامات جاری کر دیے ہیں

0
75

جیسا کہ ہر ملک اپنی معیشت کو مضبوط کرنے کے لیے ہر شعبے میں زیادہ سے زیادہ سرمایہ کاری کو فروغ دینے کی کوشش کرتا ہے اس تصور کے تحت سعودی عرب نے بھی یہ فیصلہ کیا ہے کہ صرف تیل کی خرید و فروخت کر کے ہی معیشت کو مضبوط کرنے پر اکتفا نہ کیا جائے _ اس سلسلے میں سعودے حکومت نے ایک بڑا فیصلہ کیا ہے جو کہ یہ ہے کہ سعودی عرب کی حکومت نے اپنے ملک میں سیاحت کے شعبے کو فروغ دینے کے لیے انچاس 49 ممالک کے لیے ایک نئے سیاحتی ویزے کا حکم جاری کیا ہے اور بیرون ممالک کی کمپنیوں کو بھی اپنے ملک میں سیاحت میں سرمایہ کاری کی پیش کش کی ہے _
اس سلسلے میں سعودی حکومت نے سیاحوں کے لباس کے حوالے سے نئے احکامات صادر کیے ہیں _ اگرچہ کہ پہلے سے عائد لباس پر انتہائ سخت پابندیوں میں کافی حد تک نرمی کی گئ ہے جیسا کہ پہلے جو حکم تھا کہ عوامی موامات پر مرد اور عورت کا اکٹھے ہونا منع ہے , نیز خواتین کو کالا چغا پہننا پڑتا تھا…
لیکن اب سیاحت کے سربراہ احمد الخطیب نے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ عبایہ اب خواتین کے لیے ضروری نہیں ہے جو کہ بیرون ممالک کے لیے سیاحت کے لیے آئیں گی لیکن ایک ایسا لباس جس سے کندھوں اور گھٹنوں کو ڈھانپا جا سکے , عوامی مقامات پر پہننا لازمی ہے….
ساتھ ہی ساتھ محکمہ سیاحت کے سربراہ نے الکوحل پر بھی سختی سے پابندی عائد کی ہے , اس حوالے سے انھوں نے بیان دیا ہے کہ ہمارے ملک میں اس کے علاوہ ایسی کئ چیزیں ہیں جن سے سیاح کافی لطف اندوز ہوں گے…
محکم سیاحت کے سربراہ کافی حد تک پرامید ہیں کہ زیادہ سے زیادہ سیاح سعودی عرب میں سیاحت کرنے آئیں گے _ گزشتہ دنوں میں ہونے والے حملوں سے سیاحت پر کوئ اثر نہیں پڑے گا _ 2030 تک 100ملین سیاحوں کو اپنے ملک میں لانے کا منصوبہ ہے _ اس پیش رفت کو ایک تاریخی لمحہ قرار دیا جاتا ہے _ سعودی حکومت لافی حد تک پر امید ہے کہ ان کا کلچر , رسوم و رواج سیاحوں کو مائل کرنے میں کافی حد تک معاون ثابت ہو گا….

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here