عمران خان سرخرو۔۔۔!!! ساری کرپشن (ن) لیگ کے دور میں ہوئی

0
271

ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پاکستان کے سربراہ کا رپورٹ پر وضاحتی بیان سامنے آگیا ہے، جس میں کہا ہے کہ کی کرکردگی رپورٹ سال2015ء سے 2017ء کی ہے جو نواز شریف کے دور اقتدار کی ہے، جبکہ کی پی ٹی آئی کی حکومت کے بد عنوانی کیخلاف اقدامات قابل ستائش ہیں

اور یہ رپورٹ پی ٹی آئی حکومت کی نہیں ہے۔ تفصیلات کے مطابق چیئر مین ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل سہیل مظفر نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت میں نیب کارکردی بہتر ہوئی، انڈیکس میں شامل ڈیٹا ٹرانپیرنسی انٹرنیشنل کا نہیں ہوتا، بدعنوانی کیخلاف حکومتی اقدامات قابل ستائش ہیں۔ رپورٹ سال 2019ء سے متعلق نہیں تھی۔ کسی نے موجودہ حکومت کیخلاف گھناؤنی سازش کی ہے۔

انہوں نے کہا انڈیکس 2019ء میں یہ نہیں کہا بدعنوانی بڑھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسکور کم ہونا یہ ظاہر نہیں کرتا کرپشن میں اضافہ ہوا ، رپورٹ میں نہیں لکھا کہ 2019ء میں پاکستان میں کرپشن پڑھی۔

چیئر مین ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل سہیل مظفر نے کہا غلط بیانی سے پاکستان کی ساکھ کو نقصان پہنچ سکا ہے۔ انڈیکس 2020ء ڈیٹا پبلک نہیں کیا گیا۔ اس ڈیٹا سے 2019 کے رولز آف لاء میں اسکور 2نمبر کم ہوا۔ سی پی آئی رپورٹ کے لیے 8 ذرائع استعمال کیے۔

موجودہ حکومت میں نیب کارکردگی بہترر ہوئی۔ پاکستان کا اسنٹینڈرڈ مارجن بدستور 2.46 ہے۔ ٹی آئی رپورٹ میں استعمال کیا گیا زیادہ تر ڈیٹا (ن) لیگ دور حکومت کا ہے۔ سہیل مظفر نے مزید کہا کہ ریکارڈ درست کرنے کے لیے پریس ریلیز جاری کی گئی۔ اس سے قبل یہ خبریں گردش کر رہی تھیں کہ 2018ء کی نسبت 2019ء میں پاکستان میں کرپشن بڑھ گئی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here